تبلیغات
خورشید ولایت - سر آغاز


ولایت فقیہ نظام ما خامنہ ای امام ما

ABOUT BLOG:


ARCHIVE:


MENU:


LAST POSTS :


LINKS:


SPECIAL PAGES:


AUTHORS:


AP KYA KEHTE HAIN:


STATICS:



Admin Logo themebox

سر آغاز

1392/10/21-04:26 ب.ظ

اسلامی بیداری

سر آغاز

 

ترجمہ : شبیر احمد ملا

 

قائد انقلاب اسلامی  کی نگاہ سے اسلامی بیداری، خطے نیز جہاں کی موجودہ صورتحال کے تجزیہ سے آگاہی  ایک فوری ضرورت ہے جس کے لئے کئی ایک عوامل کا ذکر کیا جا سکتا ہے۔

1:۔ منصب رہبریت سے قطع نظر ایک تجزیہ نگار کی حیثیت سے وہ ایک عرصہ سے اس مسئلہ کو دیکھ رہے ہیں اور اس مسئلہ میں ایک معتبر صاحب نظر ہیں ۔

2:۔ خطے کی تاریخ میں اسلامی بیداری ایک عدیم المثال امر ہے اور یہ ایک روان تشخص کی حامل ہے لہذا اہل ولایت کے لئے اس صورتحال میں ولی فقیہ  کے نکتہ نظر سے آگاہی لازمی ہے ۔

3:۔ اسلامی بیداری اور انقلابی تحریکوں کے حوالے سے اہلیانِ دانشگاہ کے نکتہ نظر کو دیکھنے کے بعد ضروری بنتا ہے کہ خطے کے لئے جو تاریخ رقم ہو رہی ہے اس کے صحیح ادراک کے لئے رہبر معظم کے دامنِ فکر میں پناہ لی جائے ۔

4:۔ مغربی ذرائع ابلاغ اور تجزیہ نگار حضرات کی مسلسل کوشش ہے کہ اس تاریخی بیداری اور ان انقلابی تحریکوں کا مغرب کی تسلط پسند سوچ کے آئینہ میں تجزیہ کریں ۔ رہبر انقلاب مغرب کی اس ابلاغی ہژیمونی کو توڑنے کے در پے ہیں اور اس کتاب میں اس امر کے فراوان نمونے موجود ہیں ۔

5:۔ بحث شروع کرنے سے پیشتر ، قائد انقلاب اسلامی  کے نکتہ نظر کے تجزیہ کے لئے دو مقدماتی باتوں کی جانب اشارہ کرتے ہیں ۔

۱۔اسلامی بیداری دیرینہ آرزو

اسلامی انقلاب سے پہلے اور بعد کے سالوں میں امام خامنہ ای کے بیانات کو دیکھنے اور تجزیہ سے پتہ چلتا ہے کہ وہ رہبر کبیر انقلاب اسلامی حضرت امام خمینی ؒ کی مانند انقلاب کے آغاز سے ہی دنیا اور اس خطے میں اسلامی بیداری کے لئے خصوصی توجہ اور اہمیت کے قائل رہے ہیں ۔ امام خمینی ؒ اور امام خامنہ ای کے گفتار و کردار میں ایسےبیانات ، تجزیے اور فیصلے ملتے ہیں جو اسی یقین کے مظہر ہیں اور ان میں غور و فکر کے نتیجہ  میں اس عمیق حکمت عملی تک رسائی ممکن ہے جس کوہم چراغ راہ قرار دے سکتے ہیں ۔

گذشتہ پچاس سال کے دوران جب بھی اس خطے میں تبدیلی کی کوئی ہوا چلی ہے جس میں مغربی دنیا کے منصوبوں کو ناکامی ہوئی ہو اور اسلامی شعار دئے گئے ہوں ، رہبر انقلاب نےاس تبدیلی کو اسلامی بیداری کے عنوان سے یاد کیا ہے ۔

۲۔اسلامی بیداری کا لاثانی تشخص

لیکن جو بات رہبر انقلاب کے ان دنوں کے بیانات اور نکتہ نظر سے سامنے آئی ہے وہ یہ ہے کہ موجودہ دور کی صورتحال کے حوالے سے ان کے نظریات اور تجزیےان کے گذشتہ تجزیوں سے متفاوت ہیں ۔ اس فرق کی جانب انہوں نے خود بھی اشارہ فرمایا ہے اور موجودہ تبدیلی کو بے مثال قرار دیا ہے ۔

دوسرے الفاظ میں اگرچہ اسلامی بیداری کا یہ سلسلہ ایک صدی پرانا ہے اور گذشتہ سو سال کے دوران اسلامی ممالک اور پوری دنیا میں اس طرح کے واقعات اور تبدیلیاں نظر آتی ہیں لیکن حالیہ صورتحال اس ایک سو سالہ ماضی کا تسلسل ہرگز نہیں ہے بلکہ یہ ایک جدید اور وسیع تبدیلی ہے ، اپنے تشخص اور ماہیت میں بے مثال ہے ، اور تاریخ عالم میں ایک بے بدیل تبدیلی کی نوید ہے ۔

اس فرق کا بنیادی سبب رہبر انقلاب  کی منفردنظر ہے جس کی بنیادیہ ہے کہ تاریخ کو درس گاہ قرار دے کر اس سے سبق حاصل کیا جائے نیز اس کے سنن اور آفاقی قوانین کے جاری ہونے سےمستضعف طبقہ کے غلبہ اورتکریم کی راہ کھل جاتی ہے اور ان کی یہی بصیرت اور یہی نکتہ نگاہ اہل ولایت کے دلوں پر راج کرتا ہے ۔

"خطے کی موجودہ صورتحال تاریخ میں عدیم المثال ہے ۔ اسلامی بیداری اور یہ عظیم صورتحال جو اس خطے میں نظر آ رہی ہے ، اس کی اسلامی جمہوریہ کی تاریخ میں انقلاب سے لے کر آج تک کوئی مثال نہیں ملتی ہے بلکہ اس سے ملتا جلتا نمونہ بھی نہیں ۔ عظیم کام انجام پایا ہے اور ایک بڑا واقعہ رونما ہوا ہے ۔

ایسا نہیں کہ ہم ان تبدیلیوں کا تاریخی پس منظر نہ جانیں کہ کیا ہے ؟ نہیں اس سے ہم نے آگاہی حاصل کر لی ہے ۔ لیکن جو کچھ آج انجام پا رہا ہے وہ عدیل المثال ہے اس کا ماضی میں کوئی نمونہ نہیں ہے ۔ "

اس کی ماضی میں مثال نہیں ملتی ہے ۔جہاں تک انقلابوں کے حوالے سے ہمار مطالعہ ہے ، جہاں تک ہم نے پڑھا ہے ، سنا ہے اس امر کی اس وسعت کے ساتھ ماضی میں کوئی مثال نہیں ملتی ہے ۔ یہ ایک نئی صورت حال ہے ۔ حقیقت میں اس خطے کی تاریخ اور نتیجہ میں پوری دنیا کی تاریخ نے پلٹا کھایا ہے ؛ تاریخ کے ایک نئے باب کا آغاز ہوچکا ہے ۔

ہر دن اس خطے  سےاور پوری دنیا سے نئی اور تازہ خبریں ملتی ہیں ۔ ہمارے اس خطے میں جو مسائل پیدا ہوچکے ہیں اور پوری دنیا میں جو مسائل جنم لے رہے ہیں وہ عدیم المثال ہیں ؛ چاہے ان مسائل کا تعلق ہمارے خطے سے ہو، چاہے مغربی دنیا کے مسائل ہوں ، چاہے  یورپ اور امریکہ میں پیدا شدہ مسائل ہوں۔ دنیا کی صورت حال بہت حساس ہے،  البتہ یہ ہمارے حق میں ہے ۔

لہذا اس بات کی ضرروت ہے کہ دنیا کی موجودہ صورت حال اور وقوع پذیر واقعات نیز ان تحریکوں اور انقلابوں کا قائد انقلاب اسلامی کی نگاہ سے جائزہ لیا جائے ۔ کتاب ھذا میں قائد انقلاب اسلامی  کی نگاہ سے اسلامی بیداری کی حقیقیت  اور دنیا کی موجودہ بدلتی صورت حال کا جائزہ لیا گیا ہے ۔ یہ اس سلسلے کی پہلی کتاب ہے ۔

 

 



نظرات() 
LAST EDITING:1392/10/21 04:29 ب.ظ

http://merrimccosh.hatenablog.com
1396/03/2 07:12 ق.ظ
I'll right away grab your rss feed as I can not find your
email subscription link or e-newsletter service. Do
you've any? Kindly let me know in order that I may subscribe.
Thanks.
 
لبخندناراحتچشمک
نیشخندبغلسوال
قلبخجالتزبان
ماچتعجبعصبانی
عینکشیطانگریه
خندهقهقههخداحافظ
سبزقهرهورا
دستگلتفکر